پاکستان مشکل ترین مرحلے میں داخل، جون کے وسط تک کوروناکیسز ایک لاکھ سے تجاوز کرنے کا خدشہ، لاہورکاکوئی علاقہ محفوظ نہیں

اسلام آباد،لاہور (پاکستان نیوز) دنیا کے بیشتر ممالک کورونا سے متاثر ہوچکے ہیں اور اب پاکستان میں بھی مشکل ترین مرحلے میں داخل ہوگیا، کورونا کا پھیلاؤ مزیدتیز ہوگیا ہے اور حکومتی اندازوں کے مطابق جون کے وسط تک کورونا کے کیسز ایک لاکھ سے تجاوزکرنے کا امکان ہے، اس وقت حکومت کے پاس ایس او پیز پر عمل درآمد کروانے کے علاوہ کوئی آپشن نہیں، میڈیا میں ایسی اطلاعات بھی ہیں کہ پنجاب کے دارلحکومت لاہور کا کوئی قابل ذکر ایسا علاقہ نہیں جہاں کورونا کا کوئی مریض نہ ہو، کسی محلے کے بارے میں کچھ کہا نہیں جاسکتا۔

حکومتی اندازے کے مطابق جون کے وسط تک خطرناک وائرس 2500 مزید جانیں نگل سکتا ہے، فی الوقت ایس او پیز پر عملدرآمد کے علاوہ حکومت کے پاس اور کوئی آپشن موجود نہیں،لاہور میں سمارٹ سیمپلنگ کے دوران کئے جانے والے ٹیسٹوں میں 6 فیصد کا رزلٹ پازیٹو رہا، لاہور کے 6 ٹاونز میں پازیٹو ٹیسٹ کی شرح 14 اعشاریہ 7 فیصد ریکارڈ کی گئی، سمارٹ سیمپلنگ کے نتیجے میں لاہور میں کرونا کے ساڑھے چھ لاکھ سے زائد کیسز کا اندازہ لگایا گیا ہے، ان کیسز میں علامات نہیں پائیں گئیں لیکن یہ انفیکشن اور لوکل ٹرانسمیشن کا ذریعہ بنے، سمارٹ سیمپلنگ مختلف ہاٹ سپاٹس، ورک سٹیشنز اور رہائشی علاقوں سے کی گئی۔وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کو بھیجی گئی سمری میں انکشاف کیا گیا ہے کہ لاہور میں کورونا خطرناک حد تک پھیل گیا ہے، کوئی بھی رہائشی علاقہ اور قصبہ وبا سے محفوظ نہیں۔

نجی ٹی وی جیونیوز کے مطابق سیکرٹری صحت کیپٹن ریٹائرڈ عثمان کا کہنا ہے کہ محکمہ صحت کی جانب سے 15 مئی کو وزیراعلیٰ پنجاب کو لاہور میں کورونا وائرس کے کیسز کی صورت حال کے حوالے سے سمری ارسال کی گئی تھی۔اس میں بتایا گیا کہ کورونا ہاٹ سپاٹ، رہائشی اور کام کی جگہوں سے سیمپل لیے گئے، عمومی طور پر لیے گئے سیمپلز میں 5 اعشاریہ 18 اورسمارٹ سیمپلنگ میں 6 اعشاریہ 01 فیصد ٹیسٹ مثبت آئے، اوسطاًتمام سیمپلز میں 6 فیصد کا ٹیسٹ پازیٹیو رہا،بعض ٹاؤنز میں 7 اعشاریہ 14 فیصد رہا۔اسی سمپلنگ کے بعد محکمہ صحت کے ٹیکنیکل ورکنگ گروپ نے لاہور میں 4 ہفتوں کے مکمل لاک ڈاون کی سفارش کی، سفارش کی گئی ہے کہ 50 سال سے اوپر کے لوگوں کو قرنطینہ میں یا علیحدہ رکھا جائے اور لوگوں کا گھروں میں رہنا لازمی قرار دیا جائے۔

کیپٹن ریٹائرڈ عثمان نے مزید بتایا کہ ماہرین پر مشتمل افراد کی جانب سے سفارشات بھیجی گئی تھیں اورسفارشات پر دوسرے محکموں سے بھی رائے لینے کی تجویز دی گئی،سفارشات سے پہلے باقاعدہ ٹیسٹ کرنے کی پوری مشق کی گئی۔ یہاں یہ امر بھی قابل ذکر ہے کہ عیدالفطر سے چند روز قبل حکومت نے لاک ڈاؤن نرم کردیا تھا جس کی وجہ سے لوگوں میں میل جول بھی رہا اور احتیاطی تدابیر کو بھی نذرانداز کیاگیا جس کے بعد مریضوں کی تعداد اور ہلاکتوں میں بھی ہوشربا اضافہ دیکھنے کو مل رہا ہے، ایک روز میں 88افراد بھی جان کی بازی ہار چکے ہیں اور چار چار ہزار روزانہ کے نئے مریضوں کی بھی تصدیق ہوئی ہے۔

 

 

 

 





متعلقہ خبریں

Not Any News

ویڈیو
صحت

چہرے کے کیل مہاسوں سے نجات کے نسخے

دنیا بھر سے چار انتہائی دلچسپ بیوٹی ٹپس

کورونا کچھ لوگوں کو زیادہ متاثر کیوں کرتا ہے؟ معمہ حل

آپکاشہر

ary news live

ary news live

پولیس میں ہزاروں بھرتیاں، چند دنوں میں اشتہار جاری ہونے کا امکان

بلاگ

وہ پاکستانی کرکٹر جس نے ورلڈ کپ کے دوران بھی اپنی بیگم ہوٹل روم کی الماری میں چھپائے رکھی

افغانستان کی قومی ٹیم کا کھلاڑی ’ کرپشن ‘ کرتے پکڑا گیا ، بڑی سزا سنا کر مثال قائم کر دی گئی

پاکستانی کرکٹر عمر اکمل پر پابندی عائد کردی گئی

Copyright 2020 © Pakistan News, All rights reserved.
All rights reserved. Reproduction or misrepresentation of material available on this web site in any form is infringement of copyright and is strictly prohibited.