A PHP Error was encountered

Severity: Notice

Message: Only variable references should be returned by reference

Filename: core/Common.php

Line Number: 257

A PHP Error was encountered

Severity: Warning

Message: Cannot modify header information - headers already sent by (output started at /home/pakist14/public_html/system/core/Exceptions.php:185)

Filename: libraries/Session.php

Line Number: 672

Pakistan News

اخبارات

اہم خبریں


آج سے ہزار سال بعد دنیا کیسی ہوگی ؟

آج سے ہزار سال بعد ہم او

اسلامی معاشرے کے خدوخال

دین اسلام تعمیر سیر ت و ک

16 دسمبر

16 دسمبر میں مون ہوں‘ نہی

سوات کی بیٹی

چلو کہ دشتِ جہالت کو خیر

عمران خان کے لیے

خان صاحب آپ نے 25 اپریل 1996

یا اللہ ہمیں بچالے

ارادوں اور بعض اوقات پخت

تحریکیں زور کیسے پکڑتی ہیں

دنیا کا شاید ہی کوئی ملک

عمران خان او ر ڈاکٹر طاہر القادری

کالم نگار | رحمت خان ورد

راستہ بن چکا ہے : جاوید چوہدری

جولاہاکپڑے بُننے والوں ک

کچھ قادری صاحب کے بارے میں

پاکستان پیپلزپارٹی کے دو

لاہور کینال اور موت کا خونی کھیل

ایسا محسوس ہوتا ہے کہ لاہ

آ بیل مجھے مار

جاوید قاضی کسی زمانے میں

قرض پر مبنی معیشت

پاکستان جوکہ غربت کے منح

Meet Us

Name*
Email*
Message*

حمل کے بارے میں وہ جھوٹ جنہیں دنیا سچ سمجھتے ہے

Last Updated:16-11-2014

برمنگھم (نیوز ڈیسک) حمل کا پیچیدہ عمل قدرت کے طے شدہ اصولوں کے مطابق قرار اور انجام پاتا ہے لیکن اس کے حقائق سے ناواقف ہونے کی بناءپر بہت سی ایسی باتیں مشہور ہوچکی ہیں جن میں کوئی صداقت نہیں۔ ان بے بنیاد کہانیوں میں سے چند ایک درج ذیل ہیں: -1 بعض لوگ یہ سمجھتے ہیں کہ اگر پیٹ قدرے لٹکا ہوا نظر آئے تو بیٹا ہوگا اور ایسا نہ ہونے کی صورت میں بیٹی ہوگی۔ اس بات کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں ہے کیونکہ پیٹ کی ہیئت جسم کے خدوخال کے مطابق مختلف ہوسکتی ہے۔ -2 یہ بات بھی درست نہیں ہے کہ رحم میں بیٹا ہونے کی صورت میں نمکین غذائیں کھانے کو دل کرتا ہے جبکہ بیٹی ہونے کی صورت میں میٹھی غذائیں کھانے کو دل کرتا ہے۔ -3 کچھ لوگ بیٹی یا بیٹے کے بارے میں معلوم کرنے کے لئے یہ طریقہ تجویز کرتے ہےں کہ ایک دھاتی چھلے کو دھاگے کے ساتھ باندھ کر پیٹ کے سامنے لٹکایا جائے اگر یہ دائیں بائیں حرکت کرے تو بیٹا ہے اور اگر دائرے میں گھومے تو بیٹی ہے۔ ظاہر ہے کہ اس بات میں کوئی حقیقت نہیں۔ -4 دل گھبرانا اور جلن محسوس ہونا ان بات کی علامت سمجھا جاتا ہے کہ نومولود کے سر پر بال بہت زیادہ ہوں گے لیکن حقیقت یہ ہے کہ یہ علامات حمل کے دوران اکثر خواتین کو محسوس ہوتی ہیں اور اس کا بچے کے بالوں کے ساتھ کوئی تعلق نہیں ہے۔ -5 اس کہانی میں بھی کوئی حقیقت نہیں ہے کہ جن خواتین کی ماﺅں کو حمل کے دوران زیادہ تکلیف سے نہیں گزرنا پڑا ان کی بیٹیوں کے لئے بھی یہ کم تکلیف دہ عمل ہوگا۔ -6 حاملہ خواتین کو بتایا جاتا ہے کہ کمر کے بل سونا بچے کے لئے خطرناک ثابت ہوسکتا ہے۔ یہ بات درست نہیں ہے البتہ ماہرین کا یہ کہنا ہے کہ بائیں پہلو پر سونا بچے کو خون اور خوراک کی بہتر ترسیل میں مدد دیتا ہے۔ -7 یہ خیال بھی عام پایا جاتا ہے کہ ازدواجی تعلقات سے بچے کو نقصان پہنچ سکتا ہے جبکہ یہ بات اس لحاظ سے بے بنیاد ہے کہ قدرت نے رحم مادر کو بچے کے لئے مکمل طور پر محفوظ بنایا ہے۔ -8 ایک اور عام پایا جانے والا خیال یہ ہے کہ پہلے بچے کی پیدائش عموماً مقررہ معیاد سے زیادہ دن کے بعد ہوتی ہے۔ اگرچہ یہ بات کسی حد تک دست ہے لیکن اسے مسلمہ حقیقت نہیں کہا جاسکتا البتہ یہ بات درست ہے کہ تقریباً 60فیصد پہلے بچوں کی پیدائش حمل کی مقررہ معیاد سے زیادہ وقت لیتی ہے۔ اس کی ایک وجہ یہ بھی ہوسکتی ہے کہ جن خواتین میں ایام کا عمل 28 سے زیادہ دن میں مکمل ہوتا ہے ان میں حمل کا دورانیہ بھی 9ماہ سے قدرے زائد ہوسکتا ہے۔ -9 یہ بات بھی بے بنیاد ہے کہ زیادہ تر بچوں کی پیدائش پورے چاند کے دنوں میں ہوتی ہے۔

Share or Like:

Fallow Us:

مزید خبریں